alwatantimes
Image default
بہار

سشیل مودی نےگزشتہ 40 سال کی حکومت میں ایک طویل عرصہ گزارا ، لیکن ایک اسکول بھی نہیں بنوا سکے:پپو یادو

بہار شریف(حمزہ استھانوی):جن ادھیکار پارٹی کے سربراہ اور سابق ایم پی پپو یادو نے آج ضلع نالندہ کے ہرنوت تھانہ علاقے میں نیما کول کا دورہ کیا، جہاں ماضی میں پانچویں جماعت میں پڑھنے والے سونو کمار نے وزیر اعلیٰ نتیش کمار سے اسکول میں داخلہ لینے کی درخواست کی تھی۔ پپو یادو نے آج اس بچے سے اپنے یوتھ صدر کے ساتھ ملاقات کی اور ان کی ہدایت پر راجو دانویر نے پارٹی کی جانب سے 50 ہزار روپے کی فوری مدد کرتے ہوئے سونو کو گود لیا اور اس کی عمر بھر کی تعلیم کی ذمہ داری لی۔ اس دوران بہار کے سابق نائب وزیر اعلیٰ سشیل کمار نے مودی پر شدید حملہ کیا۔ ساتھ ہی انہوں نے وزیر اعلیٰ نتیش کمار سے بہار میں مفت عام اور لازمی تعلیم کو نافذ کرنے اور تعلیم کی نجکاری کو روکنے کا مطالبہ کیا۔ اس کے ساتھ ہی پپو یادو نے سونو کے اسکول کا بھی جائزہ لیا جو خراب حالت میں تھا اور وہاں بھوسا رکھا ہوا پایا۔ پپو یادو نے کہا کہ نتیش کمار جب کلیان بیگھہ آتے ہیں تو سونو سے ملنے کے بعد بہت افسوس ہوتا ہے، لیکن پاسوان ٹولہ یا آس پاس کے بہار کے دیگر بچوں کے بارے میں کوئی بات کیوں نہیں کرتا ہے۔ پپو یادو نے کہا کہ وزیر اعلیٰ کے جانے کے بعد سونو کے گاؤں کے اسکول کو اتنے دنوں میں نئے سرے سے سنوارنا چاہیے تھا، لیکن آج بھی یہ ہلچل سے بھرا ہوا ہے۔ ایسے میں بہار میں تعلیم کی بات کیسے ہو سکتی ہے۔ یہ نالندہ علم کی سرزمین ہے۔ نتیش کمار 4 بار وزیر اعلیٰ رہے، پھر بھی نالندہ یونیورسٹی اب تک شروع نہیں کر سکی؟ کیوں آج بہار میں 6 ہزار سے زیادہ مڈل اسکول ہیں اور بہار میں 4 ہزار سے زیادہ ہائی اسکول کیوں نہیں؟ نوودیا ودیالیہ 1987 میں بنی تھی، پھر آج تک دوسری جگہ اسکول کیوں نہیں بنایا گیا؟ جنہوں نے کستوربا اور دیگر اسکولوں کے لیے زمین دینے سے انکار کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ سشیل مودی کو شرم آنی چاہئے کہ انہوں نے بھی گزشتہ 40 سال کی حکومت میں ایک طویل عرصہ گزارا ہے، لیکن ایک اسکول بھی نہیں بنوا سکے۔ جو شخص اپنے محافظ کو سیلاب میں مرنے کے لیے چھوڑ کر بھاگ سکتا ہے وہ اس بچے کی کیا مدد کرے گا اور 2000 روپے کہاں سے دے گا؟ ہم زندگی بھر سونو کی مدد کریں گے۔ لیکن یہ زیادہ اہم ہے کہ سشیل مودی ایک سونو کو دو ہزار روپے دینے آئے تھے، لیکن بہار میں ایسے کئی سونو ہیں، ان کا کیا بنے گا؟ سونو کسی کو سکھائیں گے اور سشیل مودی کو 4 ہزار روپے دیں گے۔ سشیل مودی سونو کو 2 ہزار دینے کا حق رکھتے ہیں۔ جب میڈیا ٹرائل ہوا تو وہ سونو کے پاس آئے۔ جس ملک میں مریخ اور چاند پر جانے کے بجائے نیچے شیو اور پرشورام کو تلاش کریں۔ ہندو مسلمانوں کو تاج محل کے نیچے کرنا چاہیے۔ وہاں کا تعلیمی نظام کیسے درست ہو سکتا ہے؟ انہوں نے کہا کہ ہم نے اپنے یوتھ صدر راجو دانویر سے کہا ہے کہ پارٹی اس اسکول کو بنچ، ڈیسک اور جو بھی ضرورت ہو فراہم کرے۔ دوسری طرف راجو دانویر نے کہا کہ سونو کی جانداری نے آج بہار کی تعلیم کو بے نقاب کر دیا ہے۔ کچھ لوگ 2000 روپے کا چندہ لے کر آئے ہیں۔ لیکن محترم پپو یادو جی کی ہدایت پر، ہم نے انہیں گود لیا ہے اور زندگی بھر ان کی تعلیم کا خرچ برداشت کریں گے۔ سونو کی پڑھائی پیسوں کی سیاست سے نہیں بلکہ خدمت کی مدد سے ہوگی۔ دانویر نے کہا کہ اگر بہار میں تعلیمی نظام کو بہتر بنانا ہے تو مافیا اور بدعنوانی کو تعلیم سے ہٹانا ہوگا۔ اس کے لیے ہم اور ہماری جماعت پرعزم ہے۔ اس موقع پر سینکڑوں پارٹی رہنما، کارکنان اور عہدیداران موجود تھے۔

Related posts

مریضوں کو ٹیلی میڈیسن کے ذریعے آن لائن ہیلتھ سروس ملے گی

alwatantimes

تعلیم کے ذریعہ ہی ترقی کے منازل طے ہو سکتے ہیں:حضرت امیر شریعت

alwatantimes

اردو کی بقاء کے لئے پاک و صاف صحافت کی ضرورت ہے : عبدالسلام انصاری

alwatantimes

Leave a Comment