alwatantimes
Image default
بہار قومی

مانسون کی آمد سے قبل تمام تیاریاں پوری کر لیں:نتیش

پٹنہ 18مئی :وزیر اعلیٰ جناب نتیش کمار کی صدارت میں 1انے مارگ واقع سنکلپ میں ممکنہ سیلاب اور خشک سالی سے قبل کی تیاریوں کی ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ جائزہ میٹنگ ہوئی ۔میٹنگ میں ہندوستانی موسم سائنس محکمہ کے نمائندہ نے اس سال مانسون سیشن کے دوران بارش سے قبل امکان کی جانکاری دی ۔ انہوں نے بتا یا کہ 13جون تک ریاست میں مانسون کی آمد کا امکان ہے ۔ اس سال مانسون کی مدت کے دوران ریاست میں معمول سے زیادہ بارش ہو نے کا امکان ہے ۔
آفات مینجمنٹ محکمہ کے سیکریٹر مسٹر سنجئے کمار اگر وال نے پرزنٹیشن کے توسط سے ممکنہ سیلاب اور خشک سالی کی قبل سے تیاریوں سے متعلق اہم باتوں کی جانکاری دی ۔ انہوں نے بتا یا کہ ’اسٹنڈرڈ آپریٹنگ پروسیجر‘(ایس او پی) کے مطابق سیلاب سے قبل کی تمام ضروری تیاریاں کی جارہی ہیں ۔ تمام اضلاع اور متعلقہ محکمہ کو تفصیلی ہدایات جاری کی گئی ہیں ۔ انہوں نے کشنی چلانے ، پولیتھن شیٹیں راحت کے سامان کی فراہمی ،دوا ،مویشیوں کا چارہ ،سیلاب میں پناہ لینے کا مقامات ، کمیونٹی کچن ، خشک راشن پیکٹ ، فوڈ پیکٹ اور ضلع ایمرجنسی میں چلائے جانے والے سینٹروغیرہ کے بارے میں بھی تفصیلی معلومات فراہم کرائی ۔آبی وسائل محکمہ کے سیکریٹری مسٹر سنجے کمار اگر وال ، زراعت و مویشی و ماہی وسائل محکمہ کے سیکریٹری مسٹر این سرون کمار ، سڑک تعمیرات محکمہ کے سیکریٹری مسٹر سندیپ کمار آر پڈکل کٹی ، شہری ترقیا و رہائش محکمہ کے پرنسپل سیکریٹری مسٹر آنند کشور ، صحت محکمہ کے انچارج ایڈیشنل چیف سیکریٹری مسٹر برجیش مہروترا،رورل ورک محکمہ کے سیکریٹری مسٹر پنکج کمار پال ،پبلک ہیلتھ انجینئرنگ محکمہ کے سیکریٹری مسٹر جیتندر سریواستو اور چھوٹے آبی وسائل محکمہ کے پرنسپل سیکریٹری مسٹر روی منو بھائی پر مار نے اپنے اپنے محکمہ کے ذریعہ ممکنہ سیلاب اور خشک سالی کی صورتحال سے نپٹنے کے سلسلہ میں کی گئی تیاریوں کے بارے میں تفصیلی جانکاری دی ۔جائزہ کے دوران تمام اضلاع کے ڈی ایم ویڈیو کانفرنسنگ کے توسط سے اپنے اپنے اضلاع میں ممکنہ سیلاب اور خشک سالی کے بارے میں کی جارہی تیاریوں کے تعلق سے وزیر اعلیٰ کو تفصیل سے آگاہ کرایا ۔
جائزہ کے دوران وزیر اعلیٰ نے کہا کہ متعلقہ محکموں کے افسران اور ضلع کے ڈی ایم نے ممکنہ سیلاب اور خشک سالی کی تیاریوں کے لیے کیے جارہے کام کے بارے میں تفصیلی جانکاری دی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مانسون کی آمد سے قبل تمام تیاریاں یکم جون تک پوری کر لیں ۔ آفات مینجمنٹ محکمہ مسلسل اس کی نگرانی کرتا رہے ۔ سیلاب کی صورتحال میں متاثرہ علاقوں کی ٹیم بنا کر بہتر طریقہ سے معائنہ کرائیں ۔ متاثرہ کنبوں کو فہرست بنا تے وقت پورا خیال رکھیں تاکہ کوئی بھی فائدہ سے محروم نہیں رہے ۔ کوئی بھی حقیقی حقدار فائدہ سے محروم نہ رہے یہ یقینی بنائیں ۔انہوں نے کہا کہ جن اضلاع میں سیلاب پناہ گاہ کی تعمیر کا کام مکمل نہیں ہوا ہے ۔ وہاں تیزی سے اس پر کام کریں ۔گزشتہ سال کمیونٹی کچن کو بہتر طریقہ سے چلا یا گیا تھا ،اس سال بھی سیلاب کی صورتحال میں کمیونٹی کچن کو بہتر طریقہ سے چلا یا جائے ۔
وزیر اعلیٰ نے کہا کہ سیلاب سے تحفظ کے لیے بچے ہوئے تمام کٹائو کو روکنے کے کام اور سیلاب تحفظ کام کو مانسون سے قبل مکمل کریں ۔ سیلاب کی حالت میں پشتوں کی نگرانی کے لیے خصوصی ہوشیاری برتی جائے ۔ اس کے لیے گست کا کام باقاعدہ طور سے کیے جائیں۔ نگران کے کام میں مقامی لوگوں کو لگائیں ۔ نگرانی کے کام میں لگائے جانے والے لوگوں کی خصوصی ٹریننگ کرائیں ۔ انہو نے کہا کہ سیلاب سے متاثر علاقوں میں کشتی کو بہتر طریقہ سے چلائیں اس کے لیے مناسب طور پر کشتی مہیا رکھیں ۔ سیلاب کے دوران استعمال میں لائی جانے والی کشتیوں کے کرائے اور کشتی چلانے والوں کی مزدوری کی ادائیگی وقت پر یقینی بنائیں ۔وزیر اعلیٰ نے کہا کہ انسانوں کی دوائیں ، مویشیوں کے دوائیں ،سانپ ڈسنے کی دوائیں ، کتا کاٹنے کی دوائیں ،بلیچنگ پائوڈر ،ڈائریا کی دوا کی مناسب مقدار میں فراہمی رکھیں ۔ انہوں نے کہا کہ سرک تعمیرات اور رورل ورک محکمہ سیلاب کے دوران تباہ ہونے والی سڑکوں کی مرمت کی پوری تیاری رکھیں ۔ انہوں نے کہا کہ خاص طور پر دبائو والے سائٹ کو نشانزد کریں ۔ اس سلسلہ میں عوامی نمائندوں اور مقامی لوگوں سے تبادلہ خیال کریں ۔ پل ؍پلیوں کے خلا کی صفائی کا کام بھی مانسون سے قبل مکمل کریں ۔ ندیوں کے گاد کی اڑہی اور شلٹر ہٹانے کے سلسلہ میں تیزی سے کام کریں ۔ اس سے سیلاب کا خطرہ بھی کم رہے گا اور ندیوں کی پانی جمع کر نے کی صلاحیت بھی بڑھے گی ۔ جل ،جیون ،ہریالی مہم کی طرح سات نکات میں پانی کے تحفظ کے سلسلہ میں کام کیے جارہے ہیں ۔ اس کی بھی مسلسل نگرانی کریں ۔
وزیر اعلیٰ نے کہا کہ مویشیوں کے پینے کے پانی کے لیے کیٹل ٹرف کا مناسب انتظام رکھیں ۔ مویشیوں کا چارہ ،سیلاب راحت سامان ، دوا کے ساتھ ساتھ دیگر چیزوں کی فراہم کے سلسلہ میں پوری تیاری رکھیں ۔ ایک ہفتہ کے اندر رورل ورک محکمہ ، سڑک تعمیرات محکمہ ، آبی وسائل محکمہ ، چھوٹے آبی وسائل محکمہ اور ڈی ایم کے ساتھ انچارج وزراکو لے کر پھر ایک دن جائزہ میٹنگ کرلیں اور جہاں کہیں بھی کمی نظر آئے تو اسے درست کرائیں ۔ ڈی ایم اپنے علاقہ میں سروے کرائیں کہ جنہیں گزشتہ سال کے امدار(جی آر) کی ادائیگی نہیں ہو سکی ہو ، انہیں جلد ادائیگی کرائیں ۔ ہر چیز پر نظر رکھنی ہے اور پوری طرح سے ہوشیار رہناہے ۔ مستعدی کے ساتھ تمام لوگ رہیں گے تو لوگوں کو راحت ملے گی ۔
میٹنگ میں نائب وزیر اعلیٰ جناب تارکشور پرساد ، نائب وزیر اعلیٰ و آفات مینجمنٹ کی وزیر مسزرینو دیوی ، تعلیم کے وزیر جناب وجئے کمار چودھری ، بجلی کے وزیر جناب بجندر پرساد یادو ، عمارت تعمیرات کے وزیر جناب اشوک چودھری ، آبی وسائل کے وزیر جناب سنجے کمار جھا ، ایگریکلچر کے وزیر جناب امریندر پرتاپ سنگھ ، پبلک ہیلتھ انجینئرنگ کے وزیر جناب رامپرت پاسوان ، ٹرانسپورٹ کے وزیر مسز شیلا کمار ی ، ریوینو و اصلاح اراضی وزیر جناب رام سورت کمار ، سماجی فلاح کے وزیر جناب جناب مدن سہنی ، خوراک صارفین تحفظ کی وزیرمسزلیشی سنگھ ، دیہی ترقیات کیوزیر جناب شرون کمار ، گنا صنعت و قانون کے وزیر جناب پرمود کمار ، پنچایتی راج کے وزیر جناب سمراٹ چودھری ، کوآپریٹو کے وزیر جناب سبھاش سنگھ، سائنس و ٹیکنا لوجی کے وزیر جناب سمیت کار سنگھ ، چھوٹی آبی وسائل محکمہ کے وزیر جناب سنتوش کمار سمن ، فن و ثقافت اور یوتھ کے وزیر جناب آلوک رنجن ، رورل ورک کے وزیر جناب جئنت راج ،بہار ریاستی افات مینجمنٹ اتھارٹی کے نائب صدر مسٹر ادئے کانت مشرا ، بہار ریاستی آفات مینجمنٹ اتھارٹی کے رکن مسٹر پی این رائے ،بہار ریاستی آفات آفات مینجمنٹ اتھارٹی کے رکن مسٹر منش کمار ورما ، وزیر اعلیٰ کے پرنسپل سیکریٹر مسٹر دیپک کمار ، چیف سیکریٹری مسٹر عامر سبحانی ، ڈی جی پی مسٹر ایس کے سنگھل ، ڈیولپمنٹ کمشنر مسٹر ویویک کمار سنگہ ، وزیر اعلیٰ کے پرنسپل سیکریٹری مسٹر ایس سدھارتھ ،وزیراعلیٰ کے سیکریٹری مسٹر انوپم کمار ، متعلقہ محکموں کے ایڈیشنل چیف سیکریٹری ، پرنسپل سیکریٹری ، سیکریٹری، دیگر سینئر افسران اور این ڈی آر ایف اور ایس ڈی آرایف کے افسران موجود تھے ۔ جبکہ ویڈیو کانفرنسنگ کے توسط سے سڑک تعمیرات محکمہ کے وزیر جناب نتین نوین ، ماحولیات اور آب و ہواکی تبدیلی کے وزیر جناب نیرج کمار سنگھ ، کانکنی کے وزیر جناب جنک رام ، سیاحت کے وزیر جناب نارائن پرساد سمیت دیگر وزرا ، افسران تمام کمشنری کے کمشنر ، تمام رینج کے آئی جی ، ڈی آئی جی ، تمام ضلع کے ڈی ایم ، ایس ایس پی ،ایس پی منسلک تھے ۔

Related posts

ہم کسانوں کی آمدنی بڑھانے کے لیے مسلسل کام کر رہے ہیں :نتیش

alwatantimes

پولیس فورس میں جتنی خواتین اب بہار میں ہیں اتنی ملک کے کسی بھی ریاست میں نہیں ہیں:نتیش

alwatantimes

منڈکا حادثہ: 29 افراد اب بھی لاپتہ،27افراد ہلاک،لاش کی شناخت کی کوشش جاری

alwatantimes

Leave a Comment